سوتی دھاگے کی برآمدات میں کمی، ایکسپورٹرز کو تشویش

پاکستان ٹیکسٹائل ایکسپورٹرز ایسوسی ایشن نے سوتی دھاگے کی برآمدات میں مسلسل کمی پر اظہار تشویش سمیت ایکسپورٹ کی مالیت اور کاٹن فیکٹریوں میں کپاس کی گانٹھوں کی کم آمد پر بھی اضطراب کااظہارکیا اور کہا کہ حکومت اس ضمن میں سٹیک ہولڈرز کی مشاورت سے فوری اقدامات یقینی بنائے اور بجلی و گیس کی مسلسل فراہمی سمیت مہنگی بجلی ، گیس، پٹر ولیم مصنوعات کی قیمتوں میں کمی کیلئے بھی مناسب اقدامات کئے جائیں تاکہ پیداواری لاگت میں کمی لا کر بین الاقوامی منڈیوں میں کم لاگت کے حامل ممالک کا مقابلہ ممکن بنایا جاسکے ۔ ایسوسی ایشن کے ترجمان نے بتایاکہ گزشتہ تین ماہ سوتی دھاگے کی برآمد میں 19فیصد کمی ریکارڈ کی گئی ہے ۔انہوں نے بتایاکہ رواں سال کے دوران گزشتہ تین ماہ میں مجموعی برآمدات میں بھی کمی دیکھی گئی ہے جس کے باعث حالیہ تین ماہ میں یہ برآمدات 5ارب 15کروڑ ڈالر رہیں جبکہ گزشتہ سال انہی تین ماہ کے دوران یہ شرح 6 ارب 17کروڑ ڈالر ریکارڈ کی گئی تھی۔ انہوں نے بتایاکہ کپاس کی پیداوار میں بھی تشویشناک حد تک کمی ہوئی ہے اور یکم نومبر تک ملک بھر کی کاٹن جننگ اینڈ پراسیسنگ فیکٹریوں میں 64لاکھ 65ہزار 600گانٹھ کپاس لائی گئی ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں