تیرے کن کا محتاج مقدمہ مالک!!!۔ تحریر نوشابہ یعقوب راجہ پیرس

تیرے کن کا محتاج مقدمہ مالک!!!
تحریر: نوشابہ یعقوب راجہ

یا اللہ آج 50سال کے بعد کشمیر
کا مسئلہ سلامتی کونسل میں سنا جا رہا ہے مالک تیری رحمت اور مدد درکار ہے تو تو پانی پہ چلا کے اپنوں کو کنارےپر لگا دیتا ہے۔تو تو مصر کے بازار میں بکتے بکتے مصر کے تخت پر بٹھا دیتا ہے مالک تو تو مچھلی کے پیٹ میں 40 دن تک تاریکی میں زندہ رکھ کر دنیا کو دکھا دیتا ہے تیرے معجزے لامحدود ہیں مالک تجھ سے اتنی سی التجا ہے آج کی بہری ،گونگی دنیا کو بصیرت عطا کر مالک اور کشمیریوں کو آزادی نصیب فرما آج حضرت موسی کے عصا کی طرح جسطرح اس نے سامری کے جادوگروں کو کھایا تھا اور حضرت موسی کی مدد فرمائی تھی مالک انڈیا کی ناکام اور غلیظ سوچ کو دنیا کی عدالت میں شکست دے کر پاکستان کو کشمیریوں کا مقدمہ جتا دے مالک اب تیرے ان بندوں کا دکھ نہیں دیکھا جاتا اب جب آزادی کا نعرہ پاکستان سے محبت اور یکجہتی کا مطالبہ سید گیلانی کے منہ سے سنتی ہوں تو اسلام کی نسبت سے ہم پاکستانی ہیں پاکستان ہمارا ہے تو میرے آنسو تھمنے کا نام نہیں لیتے۔میرے مالک اپنی بہنوں ،بیٹیوں اور ماووں کی بے حرمتی نہیں دیکھی جاتی اور ان کے لیے جو بھارتی سورما غلیظ زبان استعمال کرتے ہیں تو دل چاہتا ہے زبان کھینچ کر باہر نکال دوں میرے مالک میرے معصوم بچوں کی گل ہوتی زندگیاں میرے بھائیوں کے روز اٹھتے جنازے وہ بوڑھے اور کمزور کندھے جو آزادی کا سورج 72 سال سے دیکھنے کی آرزو میں قبروں کی دہلیز تک پہنچ چکے ہیں مالک ان پر رحم کر ان کے دکھ اور اس پر یہ کہنا ہم پاکستانی ہیں پاکستان ہمارا ہے تو شہید ہونا تو پاکستانی پرچم میں لپیٹ کر تدفین کرنا مالک ان محبتوں کے مقروض ہیں ہم پاکستانی آج ہم ان کا مقدمہ لے کر دنیا کی عدالت میں پہنچے ہیں دنیا کا کوئی بھی فیصلہ تیرے کن کا محتاج ہے مالک ہم پر رحم فرمان مالک ہمیں سرخرو ضرور کرنا ہم سے پہلے ہی تاخیر بہت ہو چکی ہے تیری دنیا میں مسلمان بکھر چکے مالک ہم مسلمان جسم واحد کی مانند تھے جس کے ایک عضو کو تکلیف ہو تو سارے جسم میں تکلیف ہوتی تھی لیکن اب بہت بے دردی سے ایک حصہ زخمی ہو تو ہمارے جسم اس لولے اور فالج زدہ جسم کی مانند ہو چکے ہیں جو باقی جسم کا درد محسوس نہیں کرتے ۔بھارت کے ناپاک فیصلے نے جو کشمیریوں پر مسلط کیا گیا ہے اور انھیں12 دن سے بھوکا پیاسا قید میں رکھا گیا ہے مالک شعیب ابی طالب کی گھاٹی میں بھی تیرے محبوب نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو اور ان کے ساتھیوں کو قید رکھا گیا تھا اور پھر ان کی مدد فرمائی تھی مالک آج اس محبوب نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی امت پہ بڑی نازک گھڑی آن پہنچی مالک اپنے محبوب کے صدقے ہم گناہ گاروں کو بخش دے اور ہم پر رحم فرما اور اپنی مدد بھیج مالک کشمیر کی آزادی اور پاکستان کی ساتھ الحاق پر کن فرما دے مالک ہمیں سرخرو کر دے جو مان 72 سال سے ہم پر کشمیری بہن بھائیوں کو ہے مالک اس کو پورا کرنے کی گھڑی آن پہنچی ہے ہمیں سرخرو کر دے میرے مالک ہمیں ہماری کوتاہیوں پر درگزر کرنا ہمیں مرہم بنا کشمیری بہن بھائیوں کے زخموں کا۔۔مالک کن فرما دے تجھے تیری کریمی کا واسطہ مالک تیرے رحیم،کریم اور تیرے وکیل اور نصیر ہونے کا واسطہ مالک رحم ،رحم،رحم مالک۔۔بھارت کے ناپاک عزائم کو مٹی میں ملا دے مالک میرے وطن کو محفوظ رکھنا مالک میرے کشمیر کو پاکستان سے ملا دے مالک اور آج فتح کی نوید سنا دے ہمارا مقدمہ تیرے کن کا محتاج ہے مالک کن فرما دے اور میرے وطن میری افواج کی حفاظت فرمانا مالک آمین یا رب العالمین

خدا کرے میری ارض پاک پر اترے
وہ فصلِ گل جسے اندیشہء زوال نہ ہو

یہاں جو پھول کھلے وہ کِھلا رہے برسوں
یہاں خزاں کو گزرنے کی بھی مجال نہ ہو

یہاں جو سبزہ اُگے وہ ہمیشہ سبز رہے
اور ایسا سبز کہ جس کی کوئی مثال نہ ہو

گھنی گھٹائیں یہاں ایسی بارشیں برسائیں
کہ پتھروں کو بھی روئیدگی محال نہ ہو

خدا کرے نہ کبھی خم سرِ وقارِ وطن
اور اس کے حسن کو تشویش ماہ و سال نہ ہو

ہر ایک خود ہو تہذیب و فن کا اوجِ کمال
کوئی ملول نہ ہو کوئی خستہ حال نہ ہو

خدا کرے کہ میرے اک بھی ہم وطن کے لیے
حیات جرم نہ ہو زندگی وبال نہ ہو

(احمد ندیم قاسمی )

اپنا تبصرہ بھیجیں